نیب نے لندن فلیٹس کیس کے فیصلے پر عمل درآمد شروع کردیا

قومی احتساب بیورو (نیب) نے لندن فلیٹس کیس کے فیصلے پر عمل درآمد شروع کردیا۔

احتساب عدالت سے وارنٹ گرفتاری ملتے ہی نیب کی ٹیم نوازشریف کے داماد کیپٹن صفدر کی گرفتاری کے لیے مانسہرہ روانہ ہوگئی۔

ترجمان قومی احتساب بیورو (نیب) کا کہنا ہے کہ ایون فیلڈ کیس میں احتساب عدالت کے فیصلے پر اس کی روح کے مطابق عمل کیا جائے گا۔

ترجمان نیب کے مطابق نیب کو احتساب عدالت سے ایون فیلڈ ریفرنس میں وارنٹ گرفتاری مل گئے ہیں جس کے بعد نوازشریف، مریم نواز اور کیپٹن (ر)صفدر کی گرفتاری کی کارروائی شروع کردی ہے۔

احتساب عدالت کی جانب سے ایون فیلڈ ریفرنس میں سزا کے بعد سابق وزیراعظم نواز شریف کے داماد کیپٹن (ر) محمد صفدر کا نام بلیک لسٹ میں ڈال دیا گیا ہے۔

ذرائع کے مطابق کیپٹن (ر) صفدر کسی بھی ایئرپورٹ، زمینی اور سمندری راستے سے پاکستان سے باہر نہیں جا سکیں گے۔

نیب نے نوازشریف اور مریم نواز کی وطن واپسی پر انہیں ائیرپورٹ سے ہی گرفتار کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

ترجمان نیب کا کہنا ہے کہ احتساب عدالت کے فیصلے پر اس کی روح کے مطابق عمل کیاجائے گا۔

ترجمان نیب نے وضاحت کی کہ گزشتہ روز عدالت کے فیصلے میں لکھا گیا کہ نوازشریف پر کرپشن کے چارجز نہیں ہیں لیکن نیب آرڈیننس کے مطابق جو اثاثے معلوم ذرائع آمدن سے زیادہ ہوتے ہیں وہ کرپشن کے زمرے میں آتے ہیں۔

یاد رہے کہ گزشتہ روز احتساب عدالت نے ایون فیلڈ ریفرنس میں سابق وزیراعظم نواز شریف کو 11 اور ان کی صاحبزادی مریم نواز کو 8 جب کہ داماد کیپٹن (ر) صفدر کو ایک سال قید کی سزا سنائی۔

احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے فیصلے میں نوازشریف کو 80 لاکھ پاؤنڈ اور مریم نواز کو 20 لاکھ پاؤنڈ جرمانہ بھی کیا ہے اور ایون فیلڈ اپارٹمنٹس کو ضبط کرنے کا بھی حکم دیاہے جب کہ عدالت نے کیپٹن (ر) صفدر پر جرمانہ نہیں کیا ہے۔

Comments
Loading...