Official Web

نسٹ کی طالبات کا گروپ اپنی مکینیکل صلاحیتوں سے ایک کار تیارکرنے لگا

گروپ برطانیہ کے سلور سٹون ٹریک پر منعقد ہونے والی بین الاقوامی فارمولا سٹوڈنٹ مقابلوں میں پاکستان کی نمائندگی کرے گا
نوجوان طالبات کے اس اقدام سے موٹر سپورٹس انڈسٹری میں خواتین کی شمولیت کو فروغ ملا ہے طالبات بین الاقوامی مقابلہ کے لئے فارمولا طرز کی ریس کار کی تیاری میں اپنی بھرپور صلاحیتوں کو بروئے کار لا رہی ہیں، بین الاقوامی اخبار کی رپورٹ
اسلام آباد ۔ 11 فروری (اے پی پی) نیشنل یونیورسٹی آف سائنس و ٹیکنالوجی (نسٹ) کی طالبات کا ایک گروپ اپنی مکینیکل صلاحیتوں سے ایک کار تیار کر رہا ہے جو جولائی 2018ءمیں برطانیہ کے سلور سٹون ٹریک پر منعقد ہونے والی بین الاقوامی فارمولا سٹوڈنٹ مقابلوں میں پاکستان کی نمائندگی کرے گا۔ نسٹ کی 15 رکنی ”عوج“ ٹیم بین الاقوامی فارمولا سٹوڈنٹ مقابلوں میں بے پناہ کوششوں کے بعد جگہ بنانے میں کامیاب ہوئی ہے۔ نوجوان طالبات کے اس اقدام سے موٹر سپورٹس انڈسٹری میں خواتین کی شمولیت کو فروغ ملا ہے اور یہ ٹیلنٹ کی حامل طالبات بین الاقوامی مقابلہ کے لئے فارمولا طرز کی ریس کار کی تیاری میں اپنی بھرپور صلاحیتوں کو بروئے کار لا رہی ہیں۔ یہ ٹیم نہ صرف مقابلے کی سرفہرست ٹیموں میں بڑی پوزیشن حاصل کرنے کے لئے پرعزم ہے بلکہ خواتین کو عملی میدان میں اپنی صلاحیتوں کا لوہا منوانے کے لئے معاشرے میں خواتین کے مقام اور وقار کو بلند کرنے میں کردار ادا کر رہی ہیں۔ یہ انکشاف ایک بین الاقوامی اخبار میں شائع ہونے والی ایک رپورٹ میں کیا گیا ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا کہ ”عوج“ کی ٹیم کے کار ہائے نمایاں میں خواتین کو با اختیار بنانے کے حوالے سے متعدد اقدامات شامل ہیں جس کے لئے وہ کوششیں کر رہی ہیں۔ اس ٹیم کا ایک مقصد پاکستانی خواتین کی حوصلہ افزائی کرنا ہے تاکہ وہ ان شعبوں اور منصوبوں میں شرکت کریں جنہیں عمومی طور پر مردوں کے لئے محدود رکھا گیا ہے۔ عوج ٹیم پاکستان میں بڑی کمپنیوں کا تعاون حاصل کرنے میں بھی کامیاب ہو گئی ہیں اور منفرد اور اہم سوچ کے ذریعے بڑا تعاون حاصل کیا گیا ہے۔یہ گروپ فارمولہ سٹوڈنٹ کے مقابلوں میں بین الاقوامی شائقین کے سامنے اپنی مثالی مہارتوں کا مظاہرہ پیش کرے گا جس سے پاکستانی خواتین کی حقیقی صلاحیتوں کا اظہار ہوگا۔ یہ بات قابل ذکر ہے کہ پاکستانی خواتین کا یہ گروپ برطانیہ اور پاکستان کے اندر اپنے مقاصد کے حصول میں کامیاب ہوا ہے۔ رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ عوج ٹیم کا یہ اقدام سماجی ترقی اور سماجی اصلاحات کی نمائندگی کیلئے سازگار ماحول کے فروغ کی جانب ایک گراں قدر قدم ہے۔عوج ٹیم کی مارکیٹنگ مینجر وردہ جمال نے اتوار کو یہاں اے پی پی کو بتایا کہ پہلی مرتبہ تمام طالبات پر مشتمل ٹیم انہیں ٹریک پر کار نمبر199 کے ساتھ مقابلوں میں پاکستان کی نمائندگی کرے گا۔ انہوں نے کہا کہ تمام ٹیم کے اراکین نسٹ کی طالبات ہیں جن کا انتخاب یونیورسٹی کی بزنس لاجک کیس (بی ایل سی)نے مسابقتی بنیاد پر کیا ہے۔منصوبے کی تفصیلات بتاتے ہوئے انہوں نے کہا کہ تخمینہ لاگت سیلز حجم،مارکیٹ کا حدف اور منصوبے کا استحکام بی ایل سی بڑے پیمانے پر کررہی ہے۔بی ایل سی کی کارکردگی کی بدولت ہمیں مقابلے کا ایک مرحلہ عبور ہوا ہے۔ وردہ نے کہا کہ ٹیم کی اراکین طالبات یونیورسٹی کے مختلف شعبوں سے ہیں جن میں الیکٹریکل انجینئرنگ،انڈسٹریل انجینئرنگ اور بزنس منیجمنٹ کے شعبے شامل ہیں جبکہ ٹیم میں کوئی مکینیکل انجینئر شامل نہیں ہے۔ مقابلے کا اہتمام انسٹی ٹیوٹ آف مکینکل انجینئرنگ (آئی ایم ای سی ایچ ای)کی طرف سے کیا گیا ہے۔ میکنیکل انجینئرز اس مقابلوں کیلئے ٹیم کا اثاثہ ہوسکتے ہیں لیکن ٹیم عوج نے ثابت کردیا ہے کہ یونیورسٹی میں صرف ڈگری تک محدود نہیں رہنا چاہیے اور آپ کی سوچ بلند ہو تو آپ اپنی صلاحیتوں کا اظہار کرسکتے ہیں۔ہماری ٹیم کی طالبات کٹائی،گرینڈنگ،ویلڈنگ اور مارکیٹ میں نیٹ ورکنگ سمیت تمام کام کررہی ہیں۔انہوں نے کہا کہ عوجکی ٹیم کی ریس کار کی ڈرائیور بھی خاتون ہوگی جو مردوں کا مقابلہ کرے گی۔

Comments
Loading...