اداکار شان کا جاوید اختر کو متنازع ٹویٹ پر کرارا جواب

لوامہ حملے کے بعد معروف بھارتی شاعر جاوید اختر نے اہلیہ شبانہ اعظمی کے ساتھ کراچی کا دو روزہ دورہ منسوخ کرتے ہوئے متنازع ٹوئٹ شیئر کی جس پر پاکستانی اداکار شان شاہد بھڑک اٹھے۔

 جاوید اختر اور شبانہ اعظمی کو نامور شاعر کیفی اعظمی کی سالگرہ کے موقع پر کراچی آرٹس کونسل میں منعقد ایک ادبی کانفرنس کے لیے مدعو کیا گیا تھا جس کو  دونوں نے مقبوضہ کشمیر کے ضلع پلوامہ میں دھماکے کے باعث منسوخ کردیا۔

جاوید اختر نے ٹوئٹ میں لکھا کہ ’کراچی آرٹس کونسل کی جانب سے مجھے اور شبانہ کو  کیفی اعظمی اور ان کی شاعری کے حوالے سے دو روزہ ادبی کانفرنس کے لیے مدعو کیا تھا جسے ہم نے منسوخ کردیا ہے‘۔

اس کے علاوہ انہوں نے ٹوئٹ میں 1965 کی پاک بھارت جنگ کے دوران کیفی اعظمی کی لکھی گئی نظم ’اور پھر کرشن نے ارجُن سے کہا‘ کا حوالہ بھی تنقیدی انداز میں دیا۔

Javed Akhtar

@Javedakhtarjadu

Kranchi art council had invited. Shabana and me for a two day lit conference about Kaifi Azmi and his poetry . We have cancelled that . In 1965 during the indo Pak war Kaifi saheb had written a poem . “ AUR PHIR KRISHAN NE ARJUN SE KAHA “

3,336 people are talking about this

ایسے میں شان شاہد نے جاوید اختر کی ٹوئٹ پر جواب دیتے ہوئے لکھا کہ ’دراصل یہی وقت ہے آنے کا، دوستی اور بھروسہ دکھانے کا جو آپ ہم پر کرتے ہیں، یہ حقیقت ہے کہ پاکستان نے کچھ نہیں کیا ہے، یاد رکھیں نفرت نے الیکشن جیت لیا ہے‘۔

انہوں نے مزید لکھا کہ ہم 1947 سے 2019 تک اس سانحہ میں ہونے والے تمام انسانی جانوں کے نقصان پر شدید مذمت کرتے ہیں۔

Javed Akhtar

@Javedakhtarjadu

Kranchi art council had invited. Shabana and me for a two day lit conference about Kaifi Azmi and his poetry . We have cancelled that . In 1965 during the indo Pak war Kaifi saheb had written a poem . “ AUR PHIR KRISHAN NE ARJUN SE KAHA “

Shaan Shahid

@mshaanshahid

Actually now is the time to come,and show the friendship and trust you have on us ..it is a fact that Pakistan has nothing to do with it , remember hate wins elections ..we condole the deaths of all the humans who died in this tragedy .. from 1947 till 2019

294 people are talking about this

بعد ازاں ایک بھارتی صارف سوبودھ نے تبصرہ کرتے ہوئے پاکستان پر الزام تراشی کی اور کہا کہ ہم بے وقوف نہیں ہیں۔

جس پر شان شاہد نے منہ توڑ جواب دیتے ہوئے انہیں بھارتی جاسوس کلبھوشن کی یاد دلا دی۔

Subodh@subodhh9879

Bhai mere…Osama Laden was in pakistan…you had nothing to do….Ebrahim dawood in Pakistan…you have nothing to do….Azhar Masoor in pakistan….you have nothing to do….Kasab from pakistan….you dint do any thing…..come on Shaan..we are not fools..

Shaan Shahid

@mshaanshahid

You forgot kalbhushan yadev he is also in Pakistan

115 people are talking about this

یہی نہیں شان شاہد نے تبصرے میں جاوید اختر سے گزارش کی کہ ایسی نظم لکھیں جو آپ کے سُسر نے مقبوضہ کشمیر کے لیے لکھی تھی جس کے کچھ اشعار شان نے خود بھی لکھے ۔

’ ظلم رہے اور ارمان بھی ہو کیا ممکن ہے تم ہی کہو

ہنستے گاتے روشن وعدے ترقی میں ڈوب گئے

بیتے دنوں کی لاش پر اے دل میں روتا ہوں تو بھی رو

Javed Akhtar

@Javedakhtarjadu

Kranchi art council had invited. Shabana and me for a two day lit conference about Kaifi Azmi and his poetry . We have cancelled that . In 1965 during the indo Pak war Kaifi saheb had written a poem . “ AUR PHIR KRISHAN NE ARJUN SE KAHA “

Shaan Shahid

@mshaanshahid

Pls write a poem like your father in law did ,on Kashmir the occupied paradise …zulm rahay or aman bhi ho kya mumkin hay tum hi kaho .. hastee gatee roshan wadee tareeqee maim doob gai… betay Dino ki Laash per aye dil main rotaa hoon tu bhi roo

642 people are talking about this

واضح رہے کہ گزشتہ برس جاوید اختر نے ایک بیان میں کہا تھا کہ بھارت میں تخلیقی آزادی محدود ہورہی ہے، اختلاف رائے کو برداشت کیا جائے کیوں کہ ہم دن بہ دن قدامت پسندی کی جانب بڑھ رہے ہیں۔

Comments
Loading...