نواز شریف کی طبی بنیادوں پر درخواست ضمانت، فیصلہ محفوظ

اسلام آباد:  اسلام آباد ہائیکورٹ نے سابق وزیراعظم نواز شریف کی طبی بنیادوں پر درخواست ضمانت پر فیصلہ محفوظ کرلیا۔

اسلام آباد ہائیکورٹ میں سابق وزیراعظم نواز شریف کی درخواست ضمانت پر سماعت ہوئی۔ وکیل خواجہ حارث نے کہا نواز شریف کی صحت خراب ہے یہ حساس معاملہ ہے، پنجاب حکومت کے نمائندے نے گزشتہ سماعت پر حقائق چھپائے، میڈیکل رپورٹ میں اب بھی انجیوگرافی کا کہا گیا ہے، نواز شریف کی بیماری کا علاج جیل میں ممکن نہیں، نواز شریف کی جان کو لاحق متعدد بیماریوں سے خطرہ ہے، انجیو گرافی سے بیماری اور علاج تجویز کیا جاسکے گا، کسی میڈیکل رپورٹ میں کوئی تضاد نہیں۔

نیب نے اپنے دلائل میں کہا کہ نواز شریف کا علاج ہو ہمیں اس پر کوئی اعتراض نہیں، جس پر عدالت نے کہا پاکستان میں یا بیرون ملک ؟ نیب پراسیکیوٹر نے کہا لاہور میں ہسپتال موجود ہیں، جس رپورٹ کے چھپانے کا دعویٰ کیا گیا وہ عدالتی ریکارڈ پر آ چکی ہے۔ وکیل خواجہ حارث نے کہا رپورٹ چھپانے والے کے خلاف کارروائی ہونی چاہئے۔ نیب پراسیکیوٹر نے کہا میڈیکل بورڈ کے تجویز تمام علاج جناح اور سروسز ہسپتال میں موجود ہیں، پمز اور پی آئی سی سمیت کئی ہسپتالوں میں یہ سارے علاج موجود ہیں۔

Comments
Loading...