فضائی آلودگی فوری طور پر دل کے دورے کی وجہ بھی بن سکتی ہے، تحقیق

بیجنگ: ایک پریشان کن تحقیق کے بعد معلوم ہوا ہے کہ عالمی ادارہ برائے صحت کے معیارات سے کم آلودگی بھی بعض افراد میں فوری طور پر ہارٹ اٹیک کی وجہ بن سکتی ہے۔

سروے کے مطابق چار طرح کی فضائی آلودگیاں یعنی نائٹروجن ڈائی آکسائیڈ، سلفرڈائی آکسائیڈ، کاربن مونوآکسائیڈ اور بہت باریک ذرات (ایف پی ایم) اگرچہ ڈبلیو ایچ او معیارات سے کم ہو تب بھی وہ بعض افراد میں اکیوٹ کورونری سنڈروم (اے سی ایس) کی وجہ بن کر دل کے دورے میں مبتلا کرسکتی ہے۔ دوسری اہم بات یہ ہے کہ آلودگی میں جانے کے ایک گھنٹے کے اندر بھی یہ کیفیت پیدا ہوسکتی ہے۔

اے سی ایس کیفیت میں دل کے پٹھوں تک خون کی روانی متاثر ہوتی ہے جس سے یا تو ہارٹ اٹیک ہوتا ہے یا پھر ایسا انجائنا لاحق ہوتا ہے جو بے قابو ہوجاتا ہے۔ اس میں خون کے لوتھڑے دل کی شریانوں کو بند کردیتے ہیں اور سینے میں فوری درد شروع ہوجاتا ہے۔
ان سب میں باریک ذرات اور نائٹروجن ڈائی آکسائیڈ کو دل کے لیے سب سے خطرناک قرار دیا گیا ہے۔ یہ دونوں آلودگیاں پہلے ہی گھںٹے انسان پر منفی اثر ڈالتی ہیں۔ اگر اس کا سامنا کرنے والوں کی عمر 65 سال یا اس سے زائد ہوتا تو اس کا اثر زیادہ ہوتا خطرناک ہوسکتا ہے۔ خواہ وہ لوگ سگریٹ نوشی نہ بھی کرتے ہوں یا پھر ان میں سانس اور مرضِ قلب کی کوئی ہسٹری نہ بھی ہو۔

شنگھائی میں فیوڈان یونیورسٹی کے پروفیسر ہیڈونگ کین اور ان کے ساتھیوں نے کہا ہے کہ اگرچہ آلودگی دل کے لیے خطرناک ہے لیکن اتنی جلدی اس کا حملہ آج تک ریکارڈ پر نہ تھا۔ دوسری اہم بات یہ کہ درمیانے درجے کی آلودگی بھی دل کی دشمن بن سکتی ہے۔

امریکن ہارٹ ایسوسی ایشن کے سرکیولیشن نامی جرنل میں شائع رپورٹ کے مطابق گاڑیوں اور کارخانوں وغیرہ کے دھویں میں ٹھوس خردبینی اور مائع باریک قطرے خارج ہوتے ہیں جو پہلے ہی دنیا بھر میں 42 لاکھ قبل ازوقت اموات کی وجہ بن رہے ہیں جو دل کے دورے اور فالج کی صورت میں نمودار ہوتی ہیں۔ یہ ذرات سانس کی بدولت پھیپھڑوں تک جاتے ہیں اور پھر خون میں شامل ہوجاتے ہیں۔

اس ضمن میں لگ بھگ 13 لاکھ افراد کا ڈیٹا جانچا گیا ۔ اس کے لیے 2015ء سے 2020ء کے دوران 2239 ہسپتالوں کا ریکارڈ دیکھا گیا ہے اور ان میں فالج اور امراضِ قلب کو دیکھا گیا ہے۔ پھر ماہرین نے فضا میں موجود آلودگیوں کا گھنٹہ وار جائزہ لیا ہے اور دیکھا ہے کہ آلودگی والے وقت (یعنی فضائی آلودگی کے ذرات، اوزون، نائٹروجن ڈائی آکسائیڈ، سلفرڈائی آکسائیڈ اور کاربن مونوآکسائیڈ) میں دل کے دورے کے واقعات کی شرح کیا ہے۔

معلوم ہوا کہ جس گھنٹے آلودگی عروج پر تھی عین اسی وقت دل کے دوروں اور اموات کے واقعات بہت حد تک زائد دیکھے گئے تھے۔ یہی دورانیہ ہے جب غیر معمولی تعداد میں مریض اے سی ایس کے شکار ہوئے اور ہسپتال پہنچے تھے۔

ماہرین نے کہا ہے کہ دنیا کے مصروف شہر اپنی فضا کو صاف رکھنے کے لیے ہرممکن اقدامات کریں۔

Comments
Loading...