ترکی روس سے اڑھائی ارب ڈالر مالیت کے ایس 400میزائل خریدے گا،معاہدہ طے

معاہدے پر نیٹو پریشان،ترکی کو اپنی پوزیشن واضح کرنے کی درخواست،اب بھی معاہدہ منسوخ کرنے کا وقت ہے،بیان
ماسکو/برسلز(این این آئی)ترکی اور روس کے مابین طے پانے والے ایک دفاعی معاہدے کے تحت ترکی روس سے زمین سے فضا میں مار کرنے والے میزائل خریدے گا۔ اس دفاعی معاہدے کے بعد ترکی اور نیٹو اتحادیوں کے تعلقات مزید بگڑنے کا خدشہ ہے۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق ترک صدر رجب طیب ایردوآن نے اپنے ملک کے ایئر ڈیفنس نظام کو مضبوط بنانے کے لیے روسی زمین سے فضا میں مار کرنے والے میزائل نظام ایس 400میزائل خریدنے کا فیصلہ کیا ۔ یہ معاہدہ اڑھائی ارب ڈالر مالیت کا ہے۔تاہم ابھی تک یہ بات مکمل طور پر واضح نہیں ہے کہ آیا ترکی اس معاہدے کو مکمل کر چکا ہے یا ابھی اس پر عملدرآمد کیا جانا باقی ہے۔ادھر نیٹو کے سیکرٹری جنرل ڑینس اشٹولٹن برگ نے کہا کہ ترکی کو اس معاہدے کے حوالے سے اپنی پوزیشن واضح کرنی چاہیے۔دوسری جانب نیٹو کے بعض سفارت کاروں نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر ان خیالات کا اظہار کیا کہ یہ فیصلہ ابھی بھی واپس لیا جا سکتا ہے۔ اس حوالے سے یہ بات بھی اہم ہے کہ انقرہ نے 2013ءمیں چین سے میزائل شکن نظام کی خرید کا ایک معاہدہ کرنے کا اعلان کیا تھا تاہم نیٹو کے احتجاج کے بعد ترکی نے اپنا یہ فیصلہ واپس لے لیا تھا۔

Comments
Loading...