امیتابھ بچن کو سری دیوی کی موت کا پہلے سے پتہ تھا؟

لاہور: () بالی ووڈ کی مشہور اداکارہ سری دیوی کی فرانزک رپورٹ سامنے آ گئی ہے جس میں ان کی موت کی وجہ نشے کی زیادتی کے بعد حادثاتی طور پر باتھ روم کے ٹب میں ڈوبنے سے ہوئی۔

سری دیوی ہفتے کے روز ایک شادی کی تقریب میں شرکت کیلئے دبئی کے جمیرا ایمرٹس ٹاور ہوٹل میں رہائش پذیر تھیں کہ اچانک بے ہوش ہو کر باتھ روم کے ٹب میں میں گر گئیں جس کے بعد انھیں فوری طور پر ہسپتال لے جایا گیا تاہم وہ راستے میں ہی دم توڑ چکی تھیں۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق سری دیوی کی فرانزک رپورٹ اور ڈیتھ سرٹیفکیٹ جاری کر دیا گیا ہے جس میں ان کی موت کی وجہ حادثاتی قرار دی گئی ہے۔ فرانزک رپورٹ کے مطابق سری دیوی کو دل کا دورہ پڑا جس سے وہ بے ہوش ہو کر باتھ روم کے ٹب میں گر گئیں اور اسی سے ان کی موت واقع ہو گئی۔ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ سری دیوی کو یہ حادثہ شراب کی زیادتی کی وجہ سے پیش آیا تھا۔

دوسری جانب امیتابھ بچن نے سری دیوی کی موت سے قبل ایسی ٹوئٹ کی جس سے یہ اندازہ لگانا مشکل نہیں کہ بگ بی کی چھٹی حس نے ان کو کسی خطرے سے پہلے ہی آگاہ کر دیا تھا۔ یاد رہے کہ دونوں اداکاروں نے ایک ساتھ کئی فلموں میں کام کیا اور وہ ایک دوسرے کے قریبی دوست سمجھے جاتے تھے۔

ان کی ٹوئیٹ نے سب کو حیرت میں مبتلا کر دیا۔ امیتابھ بچن سری دیوی کی موت سے تھوڑی دیر پہلے کیے گئے ٹوئیٹ میں لکھا کہ  نا جانے کیوں عجیب سی گھبراہٹ ہو رہی ہے۔


سری دیوی 13 اگست 1963 کو پیدا ہوئیں اور انہوں نے 4 سال کی عمر میں فلم نگری میں قدم رکھا جب کہ 1975 میں فلم ’جولی‘ میں معاون اداکارہ سے بالی وڈ میں کیریئر کا آغاز کیا۔ انہوں نے 1978 میں  سولہواں ساون  سے مرکزی کردار کیا اور اگلی ہی فلم  ہمت والا  سے مقبول ہوگئیں، فلم  صدمہ  میں سری دیوی کےکردار کو ان کی بہترین پرفارمنس قرار دیا جاتا ہے۔


سری دیوی کو 5 بار  فلم فیئر  ایوارڈ اور 2013 میں بھارت کے چوتھے بڑے ایوارڈ  پدم شری  سے بھی نوازا گیا۔ سری دیوی نے 300 سے زائد تامل، تیلگو، ملیالم اور ہندی فلموں میں اپنی صلاحیتوں کے جوہر دکھائے جب کہ ان کی شہرہ آفاق فلموں میں ’مسٹر انڈیا‘، ’چاندنی‘، ’ناگن‘، ’لمحے‘، ’وقت کی آواز‘ اور ’خدا گواہ‘ شامل ہیں۔ سری دیوی بالی وڈ میں رقص کو مرکزیت دینے والی اداکاراؤں میں سے ایک تھیں اور نوے کی دہائی ان کے نام رہی جب کہ ان کا شمار فلم نگری کی ان چند اداکاراؤں میں ہوتا ہے جن کو سوچ کر فلم کے کردار لکھے جاتے تھے۔  موم  ان کی آخری فلم ثابت ہوئی جس میں پاکستانی ادکارہ سجل اور عدنان صدیقی نے ان کے مدمقابل کام کیا۔

Comments
Loading...