Official Web

معاملہ جج معطل کرنے کا نہیں، اس کے فیصلے کو معطل کرنے کا ہے: مریم نواز

مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز نے  احتساب عدالت کے جج ارشد ملک کو عہدے سے ہٹانے کے فیصلے پر کہا ہے کہ معزز اعلیٰ عدلیہ نے حقائق کو تسلیم کر لیا ہے۔

ٹوئٹر پر ایک بیان میں مریم نواز نے لکھا کہ "اللہ کا شکر۔۔۔مگر معاملہ کسی جج کو معطل کئے جانے کا نہیں۔ اس فیصلے کو معطل کرنے کا ہے جو اس جج نے دیا۔۔۔معاملہ کسی جج کو عہدے سے نکالنے کا نہیں۔ اس فیصلے کو عدالتی ریکارڈ سے نکالنے کا ہے جو اس جج نے دباؤ میں دیا۔”

Maryam Nawaz Sharif

@MaryamNSharif

اللّہ کا شکر!
مگر معاملہ کسی جج کو معطل کئے جانے کا نہیں۔
اس فیصلے کو معطل کرنے کا ہے جو اس جج نے دیا
معاملہ کسی جج کو عہدے سے نکالنے کا نہیں۔
اس فیصلے کو عدالتی ریکارڈ سے نکالنے کا ہے
جو اس جج نے دباؤ میں دیا۔
معاملہ کسی جج کو فارغ کرنے کا نہیں
اس کے فیصلے کو فارغ کرنے کا ہے

2,349 people are talking about this

سابق وزیر اعظم نواز شریف کی صاحبزادی نے مزید لکھا کہ جج کو فارغ کرنے کا واضح مطلب یہ ہے کہ معزز اعلیٰ عدلیہ نے حقائق کو تسلیم کر لیا ہے اگر ایسا ہی ہے تو وہ فیصلہ کیسے برقرا رکھا جا رہا ہے جو اُس جج نے دیا؟

انہوں نے کہا کہ اگر فیصلہ دینے والے جج کو سزا سنا دی ہے تو اس بےگناہ نواز شریف کو کیوں رہائی نہیں دی جارہی جس کو اسی جج  نے سزا دی؟

مریم نواز نے مزید کہا کہ "اگر ایک جج Misconduct کا مرتکب پایا گیا ہے اور اسے اپنے عہدے سے ہٹا دیا گیا ہے تو اس Misconduct کا نشانہ بننے والے کو سزا کیسے دی جاسکتی ہے؟”

Maryam Nawaz Sharif

@MaryamNSharif

اگر ایک جج Misconduct کا مرتکب پایا گیا ہے اور اسے اپنے عہدے سے ہٹا دیا گیا ہے تو اس Misconduct کا نشانہ بننے والے کو سزا کیسے دی جاسکتی ہے ؟

1,969 people are talking about this
Comments
Loading...