نئے چیئر مین اور ڈپٹی چیئرمین سینیٹ کا انتخاب آج ہو گا

پارلیمنٹ کے ایوان بالا کے نئے کسٹوڈین کے انتخاب کے لیے سیاسی جماعتوں اور آزاد حیثیت میں منتخب ہونے والے سینیٹرز اپنا حق رائے دہی استعمال کریں گے۔

نئے چیئرمین سینیٹ کے چناؤ کے لیے شیڈول کا اعلان بھی کر دیا گیا ہے جس کے مطابق سینیٹ کا اجلاس صبح 10 بجے شروع ہو گا جس کا باقاعدہ آغاز تلاوت کلام پاک سے ہو گا۔

سینیٹ اراکین چیئرمین اور ڈپٹی چیئرمین سینیٹ کے لیے پولنگ بوتھ میں جا کر اپنے امیدوار کا چناؤ کریں گے اور دو یا 2 سے زائد امیدواروں میں مقابلے پر کسی ایک امیدوار کو 53 ووٹ لینے ہوں گے۔

چیئرمین اور ڈپٹی چیئرمین سینیٹ کا انتخاب خفیہ رائے شماری سے کیا جائے گا اور پولنگ کا عمل مکمل ہونے کے بعد پریزائڈنگ افسر نومنتخب چیئرمین اور ڈپٹی چیئرمین کےناموں کا اعلان کریں گے۔

پریزائڈنگ افسر پہلے چیئرمین سینیٹ اور پھر ڈپٹی چیئرمین سینیٹ سےحلف لےگا۔

صادق سنجرانی کو پیپلز پارٹی اور تحریک انصاف کی حمایت حاصل

پاکستان تحریک انصاف اور پاکستان پیپلز پارٹی چیئرمین سینیٹ کے لیے بلوچستان کے نو منتخب سینیٹر صادق سنجرانی کی حمایت کا اعلان کر چکے ہیں جبکہ مسلم لیگ (ن) اور ان کی اتحادی جماعتیں بھی آج اپنے امیدوار کے نام کا اعلان کر دیں گی۔

گزشتہ روز پاکستان تحریک انصاف اور پاکستان پیپلز پارٹی نے وزیراعلیٰ بلوچستان کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے صادق سنجرانی کی حمایت کا اعلان کیا تھا۔

پاکستان پیپلز پارٹی کی جانب سے ڈپٹی چیئرمین سینیٹ کے لیے سلیم مانڈی والا امیدوار ہیں جس کی حمایت کا اعلان چیئرمین تحریک انصاف عمران خان نے بھی کیا ہے۔

وزیراعلیٰ بلوچستان عبدالقدوس بزنجو، پاکستان پیپلز پارٹی اور پاکستان تحریک انصاف کا دعویٰ ہے کہ چیئرمین بنوانے کے لیے ان کے پاس مطلوبہ تعداد موجود ہے۔

دوسری جانب پاکستان مسلم لیگ (ن) کے رہنما مشاہد اللہ خان اور خواجہ سعد رفیق بھی دعویٰ کر چکے ہیں ان کے پاس مطلوبہ تعداد سے زیادہ سینیٹرز کی حمایت موجود ہے۔

خیال رہے کہ مارچ میں 52 سینیٹرز اپنی 6 سالہ مدت پوری ہونے کے بعد ریٹائر ہوئے جن کے چناؤ کے لیے 3 مارچ کو انتخاب ہوا جس کے مطابق اس وقت سینیٹ میں سب سے زیادہ نشستیں مسلم لیگ (ن) کے پاس ہیں۔

Comments
Loading...